राज्य

Blog single photo

نیشنل ایمرجنسی کے 45 سال مکمل ہونے کے موقع پر متاثرین کو ترکمان گیٹ ویلفیئر اینڈ کوآرڈینیشن کمیٹی پیش کی خراج تحسین

19/04/2021

19/04/2021
نئی دہلی،19اپریل(ہ س)۔
کانگریس کے دور اقتدار میں سال 1975 میں الہ آباد ہائی کورٹ سے اپنی پارلیمنٹ کی رکنیت معطل کئے جانے کے فیصلہ کے بعد اس وقت کی وزیراعظم اندرا گاندھی نے اپنے اقتدار کو قائم رکھنے ومخالفین کو خاموش کرنے کی خاطر 25 جون سنہ 1975 میں کالا حکم جاری کرکے ملک میں نیشنل ایمرجنسی نافذ کردی تھی اور راتوں رات سوتے ہوئے اپنے مخالفین کو گرفتار کرکے جیلوں میں ڈال دیا تھا۔ آج اس کالے حکم نامہ کے 45 سال مکمل ہونے پر سوشل اینڈ آر ٹی آئی ایکٹیوسٹ و ترکمان گیٹ ویلفیئر اینڈ کوآرڈینیشن کمیٹی کے صدر محمد شاہد گنگوہی نے اپنے ایک بیان میں بتایا کہ ایمرجنسی نافذ ہونے کے بعد وزیراعظم اندرا گاندھی کے بیٹے سنجے گاندھی نے پردہ کے پیچھے سے اقتدار اپنے ہاتھ میں لے لیا تھا اور اسی کے نتیجے میں راجدھانی دہلی کے مسلم علاقوں میں جبری نسبندیاں کرائیں گئیں اور پوری دہلی کو پیرس جیسا بنانے کے نام پر لوگوں کو اجاڑا گیا ، اور اسی اپنے سپنے کو پورا کرنے کی جدوجہد میں خاص کر مسلم علاقوں کو ٹارگیٹ کیا گیا ۔ اسی دوران سنجے گاندھی نے ڈی ڈی اے کے اسوقت کے وائس چیرمین جگموہن اور کارپوریشن کمشنر بہادر رام ٹمٹا و دیگر حکام کے ساتھ ملکر ترکمان گیٹ کے برسوں سے رہ رہے باشندگان کے پختہ مکانوں کو جبری مسمار کر دیا ۔ مخالفت کرنے پر یہاں کے معصوم و نہتے باشندوں پر لاٹھی، ڈنڈوں، آنسو گیس و فائرنگ کا سہارا لیکر پولس تین گھنٹے تک حیوانیت ننگا ناچ کرتی رہی جسکے نتیجہ میں کئی بے گناہ شہید کردئے گئے اور 729 خاندانوں کو جبری ترکمان گیٹ سے بے دخل کرکے ترلوک پوری و نند نگری کے اندر کھلے آسمان کے نیچے بے سرو سامان چھوڑدیا۔گنگوہی نے بتایا کہ اس منظر کو یاد کرکے آج بھی روح کانپ جاتی ہے ۔خراج تحسین پیش کرنے والوں میں نعیم کلودہ، محمد اسلم، محمد یامین اسحاق، فیاض الدین، بشیر الدین، منظور ملک، برہان کریم ،محمد عاقل ننو، چودھری فخرو بھی بطور خاص شامل ہیں۔اس موقع پر" ترکمان گیٹ پھر سے بساو¿تحریک "کے مرحومین عبدالسلام ٹھاکر، چودھری محمد دین الائچی والے، چودھری قیام الدین ،چودھری عبدالقدیر، ماسٹر شیر محمد، شرفو، شمس الدین شمو خان، بابو برف والے، ٹھیکیدارعبدارزاق، ایاز محمود، محمد اسحاق ملاجی،عاشق علی، سراج الدین کلودہ کو بطور خاص خراج عقیدت پیش کیا گیا ۔
ہندوستھان سماچار


 
Top