یوکرین، غزہ میں جنگی جرائم کی تحقیقات پر دھمکیوں سے خوفزدہ نہیں ہوں گے:کریم خان
نیویارک،15مئی(ہ س)۔ بین الاقوامی فوجداری عدالت کے پراسیکیوٹر نے منگل کو کہا کہ وہ دھمکیوں سے خوفزدہ
کریم خان 


نیویارک،15مئی(ہ س)۔

بین الاقوامی فوجداری عدالت کے پراسیکیوٹر نے منگل کو کہا کہ وہ دھمکیوں سے خوفزدہ نہیں ہوں گے جیسا کہ ان کا دفتر یوکرین اور غزہ میں ممکنہ جنگی جرائم کی تحقیقات کر رہا ہے۔

لیبیا میں جنگی جرائم کی تحقیقات کے بارے میں اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس کے دوران پراسیکیوٹر کریم خان کو روس اور لیبیا کے سفراءنے چیلنج کیا جنہوں نے غزہ کی پٹی میں حماس کے خلاف اسرائیل کے جنگ چھیڑنے پر ان کی بے عملی کو تنقید کا نشانہ بنایا۔روسی سفیر واسیلی نیبنزیا نے کہا، حیرت ہے کہ کیا اس معاملے پر آئی سی سی کا اثر اس حقیقت سے مت?ثر ہوا ہے کہ ایک نیا دو طرفہ بل امریکی کانگریس میں پیش کیا گیا ہے کہ آئی سی سی کے ان عہدیداروں پر پابندی عائد کی جائے جو نہ صرف امریکہ بلکہ اس کے اتحادیوں کے خلاف تحقیقات میں شامل ہوں۔نیبنزیا ان خبروں کی طرف اشارہ کر رہے تھے کہ اس مقصد کے لیے ایک بل امریکی کانگریس میں پیش کیا گیا ہے۔خان نے جواب میں ان دھمکیوں کا حوالہ دیا جو انہیں اور ان کے دفتر کو دی گئیں کہ وہ اپنی تحقیقات روک دیں۔انہوں نے کہا، خواہ یہ روسی فیڈریشن کی طرف سے میری گرفتاری یا عدالت کے منتخب عہدیداروں کی گرفتاری کے وارنٹ ہوں یا کسی اور دائرہ اختیار میں دیگر منتخب عہدیداروں کی طرف سے ہوں، ہم اس سے متاثر نہیں ہوں گے۔

گذشتہ سال مئی میں روس نے کریم خان کو مطلوب افراد کی فہرست میں شامل کر دیا تھا جب جنگ کے ایک حصے کے طور پر یوکرینی بچوں کو روس بھیجنے میں صدر ولادیمیر پوتن کے کردار پر عالمی عدالت نے ان کی گرفتاری کے وارنٹ جاری کیے تھے۔مئی کے اوائل میں خان کے دفتر نے ایکس پر کہا، عدالت کی آزادی اور غیر جانبداری مجروح ہوتی ہے جب افراد عدالت یا عدالتی عملے کے خلاف انتقامی کارروائی کی دھمکی دیتے ہیں۔یہ نہیں بتایا گیا کہ دھمکیاں کہاں سے آ رہی ہیں۔ایسی سرگرمی ختم کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے دفتر نے خبردار کیا، ایسی دھمکیاں حتیٰ کہ جن پر عمل نہ کیا گیا ہو وہ آئی سی سی کی انصاف کی انتظامیہ کے خلاف ایک جرم بن سکتی ہیں۔عدالت نے یہ تبصرہ امریکی اور اسرائیلی میڈیا کی ان رپورٹس کے بعد کیا ہے کہ آئی سی سی پراسیکیوٹر اسرائیلی سیاستدانوں بشمول وزیرِ اعظم بنجمن نیتن یاہو اور حماس کے رہنماو¿ں کے خلاف وارنٹ جاری کر سکتی ہے۔خان نے منگل کو کہا، ہمارا فرض ہے کہ ہم انصاف کے لیے کھڑے ہوں، مت?ثرین کے لیے کھڑے ہوں۔نیز انہوں نے کہا، اور مجھے پوری طرح ادراک ہے کہ اس کمرے میں دیو ہیکل افراد ہیں، طاقت والے اور اثر و رسوخ والے دیو ہیکل ہیں۔انہوں نے مزید کہا:ہمارے پاس قانون نام کی ایک چیز ہے۔ میں صرف اتنا کہہ سکتا ہوں کہ ہم اپنی پوری اہلیت کے مطابق کھڑے ہوں گے۔ ہم آزادی کے ساتھ اور دیانتداری کے ساتھ قانون کے لیے کھڑے ہوں گے۔

ہندوستھان سماچار


 rajesh pande