اب اقتدار سے باہر جانے کی بی جے پی کی باری ہے: مایاوتی
باندہ، 15 مئی (ہ س)۔ سابق وزیر اعلی مایاوتی بدھ کو ضلع کے اٹارہ کے ہندو انٹر کالج پہنچی اور باندہ
اب اقتدار سے باہر جانے کی بی جے پی کی باری ہے: مایاوتی


باندہ، 15 مئی (ہ س)۔

سابق وزیر اعلی مایاوتی بدھ کو ضلع کے اٹارہ کے ہندو انٹر کالج پہنچی اور باندہ چترکوٹ پارلیمانی حلقہ سے بی ایس پی امیدوار مینک دویدی کی حمایت میں منعقدہ انتخابی ریلی سے خطاب کیا۔ انہوں نے اسٹیج سے کانگریس اور بی جے پی کو نشانہ بنایا۔

انہوں نے کہا کہ کانگریس آزادی کے بعد طویل عرصے تک اقتدار میں رہی۔ غلط پالیسیوں کی وجہ سے اقتدار سے باہر ہو گئی۔ اب بی جے پی حکومت کے اقتدار سے باہر جانے کی باری ہے۔ مرکزی اور ریاستی حکومتوں پر حملہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سرکاری ملازمتوں میں ریزرویشن کوٹہ ابھی تک نہیں بھرا گیا ہے۔ انہوں نے سماج وادی پارٹی اور بی جے پی کو برہمن مخالف قرار دیا۔

وزیر اعظم مودی پر طنز کرتے ہوئے مایاوتی نے کہا کہ وہ صرف سرمایہ داروں کو مالا مال کر رہی ہیں اور انہیں غریبوں کی فکر نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کی طرح بی جے پی نے بھی جانچ ایجنسیوں کی سیاست کی ہے۔

انہوں نے بی جے پی اور انڈیا اتحاد کے منشور کو ہوا بتاتے ہوئے کہا کہ بہوجن سماج پارٹی اس وجہ سے منشور نہیں بناتی، پارٹی جو کہتی ہے وہ کرتی ہے۔ ایک بی ایس پی کو چھوڑ کر تمام پارٹیوں نے سرمایہ داروں سے کروڑوں روپے کا چندہ اکٹھا کیا ہے۔

مایاوتی نے کہا کہ اگر بہوجن سماج پارٹی کی حکومت بنتی ہے تو نوجوانوں کو نوکریاں ملیں گی اور مسلمانوں پر ظلم نہ صرف رکے گا بلکہ ملک کو اسی خطوط پر ترقی کی دھارے سے جوڑا جائے گا جس طرح پارٹی نے ریاست کو ترقی دی تھی۔ بی ایس پی سپریمو مایاوتی کے جلسہ عام کو سننے کے لیے لوگوں کی بڑی تعداد گاو¿ں سے پیدل جلسہ گاہ تک پہنچی تھی۔

ہندوستھان سماچار


 rajesh pande