بینک میں 42 لاکھ کی لوٹ، بینک ملازم ہی ماسٹر مائنڈ نکلا
دموہ، 15 مئی (ہ س)۔ مدھیہ پردیش کے دموہ ضلع کے فتح پور گاوں میں مدھیانچل بینک میں لاکھوں روپے کی لو
بینک میں 42 لاکھ کی لوٹ، بینک ملازم ہی ماسٹر مائنڈ نکلا


دموہ، 15 مئی (ہ س)۔

مدھیہ پردیش کے دموہ ضلع کے فتح پور گاوں میں مدھیانچل بینک میں لاکھوں روپے کی لوٹ کا معاملہ جیسے ہی سامنے آیا پولیس بھی حیران رہ گئی۔ یہ دموہ ضلع کی تاریخ کا ایک بڑا کیس بتایا جا رہا ہے۔ دموہ کے پولیس سپرنٹنڈنٹ شروت کریتی سوم ونشی اور ایڈیشنل سپرنٹنڈنٹ آف پولیس سندیپ مشرا نے خود کمان سنبھالی اور معاملے کو حل کرنے کے لیے پولیس کو ضلع کے تمام تھانوں کو گھیرا بندی کا حکم دیا۔ اطلاع ملتے ہی ساگر ڈویژن کے ڈی آئی جی بھی موقع پر پہنچ گئے۔

تفتیش کے دوران جب پولیس نے شک کی بنیاد پر کارروائی شروع کی تو یہ بات سامنے آئی کہ جس مدھیانچل گرامین بینک میں لوٹ کی واردات ہوئی اسی کے ایک ملازم نے جو کہ ایک عارضی ملازم ہے، اپنے ساتھیوں کے ساتھ مل کر اس لوٹ کی واردات کو انجام دیا تھا۔ واردات کی حقیقت پر نظر ڈالیں تو وہ خود بھی زخمی ہو گیا اور ساتھیوں کے ذریعہ نوٹوں کی کچھ گڈیاں ادھر ادھر نالیوں میں پھینک دی گئیں۔

پولیس کی ہوشیاری اور سرگرمی کی وجہ سے منگل کی دیر رات پورے معاملے کو حل کر لیا گیا۔ کیس میں بینک ملازم ہی ملزم نکلا۔ بدھ کو پولیس سپرنٹنڈنٹ سوم ونشی نے کہا کہ 42 لاکھ روپے کی رقم ضبط کی گئی ہے اور تین ملزمین بنائے گئے ہیں۔ پولیس معاملے کی جانچ میں مصروف ہے۔ لوٹ کی بڑی واردات کا معمہ حل کرنے میں دموہ سائبر سیل نے بھی اہم کردار ادا کیا۔

ہندوستھان سماچار//محمد


 rajesh pande