پارا دیپ بندرگاہ کارگو مینجمنٹ کے معاملے میں ملک کی بڑی بندرگاہوں میں سرفہرست ہے۔
نئی دہلی، 2 اپریل (ہ س)۔ پارا دیپ پورٹ اتھارٹی (پی پی اے) مالی سال 2023-24 میں 145.38 ایم ایم ٹی کی
پارا دیپ بندرگاہ کارگو مینجمنٹ کے معاملے میں ملک کی بڑی بندرگاہوں میں سرفہرست ہے۔


نئی دہلی، 2 اپریل (ہ س)۔ پارا دیپ پورٹ اتھارٹی (پی پی اے) مالی سال 2023-24 میں 145.38 ایم ایم ٹی کی کارگو ہینڈلنگ کی ریکارڈ کامیابی کے ساتھ نئی بلندیوں کو چھو رہی ہے۔ یہ ملک کی سب سے بڑی بندرگاہ بن کر ابھری ہے جس میں سب سے زیادہ کارگو ہینڈلنگ کی گنجائش ہے، جس نے دین دیال پورٹ، کانڈلا کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ پیرا دیپ پورٹ اتھارٹی (پی پی اے) نے اپنی 56 سالہ آپریشنل تاریخ میں پہلی بار دین دیال پورٹ کے قائم کردہ پچھلے ریکارڈ کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔

پارا دیپ پورٹ نے سال بہ سال کی بنیاد پر 10.02 ملین میٹرک ٹن (7.4 فیصد) ٹریفک میں اضافہ ریکارڈ کیا ہے۔ پارادیپ پورٹ کا مقصد گرین امونیا اور گرین ہائیڈروجن کو سنبھالنے کے لیے ایک خصوصی برتھ تیار کرنا بھی ہے، جس سے یہ ملک میں ایک ہائیڈروجن حب بندرگاہ بن جائے گی۔

بندرگاہ نے مالی سال کے دوران 59.19 ملین میٹرک ٹن کی اب تک کی سب سے زیادہ ساحلی شپنگ ٹریفک حاصل کی ہے، جس میں 0.76 ملین میٹرک ٹن کا اضافہ ہوا ہے، بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں کی وزارت نے منگل کو جاری کردہ ایک بیان میں کہا ہے کہ گزشتہ سال کے مقابلے میں 1.30 فیصد زیادہ ہے۔ .

اسی طرح تھرمل کول کوسٹل شپنگ 43.97 ملین میٹرک ٹن تک پہنچ گئی ہے جو کہ پچھلے سال کے کارگو ہینڈلنگ سے 4.02 فیصد زیادہ ہے۔ اس طرح پارا دیپ بندرگاہ ملک میں ساحلی جہاز رانی کے مرکز کے طور پر ابھر رہی ہے۔

قابل ذکر ہے کہ پارا دیپ پورٹ گزشتہ مالی سال میں اپنی برتھ کی پیداواری صلاحیت کو 31050 ایم ٹی سے بڑھا کر 33014 ایم ٹی تک کرنے میں کامیاب رہا ہے۔ اس طرح اس سمت میں 6.33 فیصد کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔ پارا دیپ پورٹ کے ذریعے حاصل کی گئی برتھ کی پیداواری صلاحیت ملک کی تمام بندرگاہوں میں سب سے زیادہ ہے۔

پورٹ نے مالی سال کے دوران 21,665 ریک ہینڈل کیے، جو کہ پچھلے مالی سال کے مقابلے میں 7.65 فیصد زیادہ ہے۔ بندرگاہ نے 2710 جہازوں کو ہینڈل کیا ہے جس میں پچھلے مالی سال کے مقابلے میں 13.82 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

وزارت نے یہ بھی بتایا کہ پارادیپ پورٹ، جس نے آج تک 80 فیصد برتھوں کو میکانائز کیا ہے، موجودہ 4 نیم میکانائزڈ برتھوں کے میکانائزیشن کے ساتھ 2030 تک 100 فیصد میکانائزڈ ہونے کا منصوبہ رکھتا ہے۔ بندرگاہ نے مزید 4 برتھیں شامل کرنے کا بھی منصوبہ بنایا ہے، جس کے لیے رواں مالی سال کے دوران ہی مطلوبہ منظوری لی جائے گی۔

ہندوستھان سماچار


 rajesh pande