گورنر سندیشکھالی پہنچے، ریاستی خواتین کمیشن کی ٹیم بھی گئی
کولکاتہ، 12 فروری (ہ س)۔ پیر کی سہ پہر، شمالی 24 پرگنہ ضلع کے تحت سندیش کھالی کے تشدد زدہ علاقے می
گورنر سندیشکھالی پہنچے، ریاستی خواتین کمیشن کی ٹیم بھی گئی


کولکاتہ، 12 فروری (ہ س)۔

پیر کی سہ پہر، شمالی 24 پرگنہ ضلع کے تحت سندیش کھالی کے تشدد زدہ علاقے میں، گورنر ڈاکٹر سی وی آنند بوس پہنچے ہیں اور دوسری طرف ریاستی خواتین کمیشن کی ٹیم بھی پہنچی ہے۔ اس حوالے سے سوالات اٹھ رہے ہیں۔ ریاستی بی جے پی کے ایک لیڈر نے کہا کہ ایک ہفتے سے تشدد بھڑک رہا ہے لیکن ویمن کمیشن کو سندیشکھالی کا علم نہیں تھا، اب جب گورنر اور بی جے پی لیڈر وہاں جا رہے ہیں تو انہیں خواتین کی فکر ہونے لگی ہے۔ یہ صرف صورت حال پر پردہ ڈالنے کی کوشش ہے۔

یہاں خواتین کمیشن کے وفد نے علاقے میں جا کر احتجاج کرنے والی خواتین سے ملاقات کی ہے۔ انہوں نے لوگوں کے غصے کی وجوہات کو سمجھنے کی کوشش کی ہے۔ خواتین نے انہیں بتایا ہے کہ ای ڈی افسران پر حملے کے اہم ملزم ترنمول لیڈر شیخ شاہجہان، ان کے ساتھی، ترنمول کے دو لیڈر شیبو ہزارا اور اتم سردار اور ان کے حمایتی مجرم عناصر علاقے میں خواتین کے ساتھ بدتمیزی کرتے ہیں۔ انہیں مسلسل تنگ کیا جاتا ہے، مارا پیٹا جاتا ہے اور بدسلوکی کی جاتی ہے۔ علاقے کے لوگوں کو مارنا پیٹنا اور زمینوں پر قبضہ کرنا بھی عام ہے۔ خواتین کئی سالوں سے اس کی وجہ سے مشکلات کا شکار ہیں اور پولیس اس میں مدد کرتی ہے۔ خواتین کمیشن نے اپنی رپورٹ تیار کر لی ہے اور وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی سے بات کرنے کے بعد مزید سخت کارروائی کا یقین دلایا ہے۔

خواتین کمیشن نے کہا ہے کہ جن لوگوں کے خلاف الزامات لگائے گئے تھے انہیں گرفتار کر لیا گیا ہے۔ شیخ شاہجہان مفرور ہے اسے بھی گرفتار کیا جائے گا۔

ہندوستھان سماچار


 rajesh pande