آئی پی ایل 2024 کا حصہ نہیں ہوں گے انگلش تیز گیندباز جوفرا آرچر
نئی دہلی، 4 دسمبر (ہ س)۔ انگلش تیز گیندباز جوفرا آرچر انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) کے 2024 ایڈی
آئی پی ایل 2024 کا حصہ نہیں ہوں گے انگلش تیز گیندباز جوفرا آرچر


نئی دہلی، 4 دسمبر (ہ س)۔

انگلش تیز گیندباز جوفرا آرچر انڈین پریمیئر لیگ (آئی پی ایل) کے 2024 ایڈیشن میں نہیں کھیلیں گے کیونکہ انگلینڈ کرکٹ بورڈ (ای سی بی) اگلے سال ہونے والے ٹی- 20 ورلڈ کپ کی تیاری میں ان کے کام کے بوجھ کو کنٹرول کرنا چاہتا ہے۔

آرچر نے مئی 2023 کے بعد سے کوئی پیشہ ورانہ کرکٹ نہیں کھیلی ہے، اس دوران انہیں آئی پی ایل میں ممبئی انڈینز کے لیے کھیلتے ہوئے کہنی کے اسٹریس فریکچر کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ انہوں نے ورلڈ کپ کے دوران ریزرو کے طور پر مختصر طور پر ہندوستان کا سفر کیا، لیکن ممبئی میں تربیت کے دوران کہنی میں زیادہ درد کا سامنا کرنا پڑا اور ایک ہفتے سے بھی کم عرصے بعد وطن واپس چلے گئے۔

ای ایس پی این کرک انفو کے کے مطابق آرچر نے 19 دسمبر کو دبئی میں ہونے والی آئی پی ایل نیلامی کے لیے رجسٹریشن نہیں کرایا ہے۔

انہوں نے حال ہی میں اکتوبر 2023 سے ستمبر 2025 تک چلنے والے دو سالہ انگلینڈ کے مرکزی معاہدے پر دستخط کیے اور ای سی بی نے آرچر سے نیلامی کے لیے رجسٹر نہیں کرانے کے لیے کہا تھا۔

انگلینڈ مینز مینیجنگ ڈائریکٹر آف کرکٹ روب کی نے بار بار اس بات پر زور دیا ہے کہ انگلینڈ کو فرنچائز لیگ کے خلاف پیچھے ہٹنے کے بجائے ان کے ساتھ کام کرنا چاہیے ۔ لیکن ای سی بی کا خیال ہے کہ اگر آرچر ہندوستان میں آئی پی ایل کھیلنے کے بجائے اپریل اور مئی میں برطانیہ میں ان کی نگرانی میں رہتے ہیں تو ان کی واپسی کا انتظام کرنا آسان ہوگا۔

آرچر کو ابتدائی طور پر ممبئی انڈینز نے آئی پی ایل 2022 سے قبل 8 کروڑ روپے میں خریدا تھا، حالانکہ فرنچائز کو معلوم تھا کہ وہ کمر کی چوٹ کی وجہ سے پورے سیزن سے باہر ہو جائیں گے۔ لیکن گزشتہ ہفتے اسے اپنے معاہدے سے فارغ کر دیا گیا تھا۔

انہیں 2024 کے اوائل میں ایس اے 20 کے دوسرے سیزن کے لیے ممبئی انڈینز کی معاون فرنچائز ایم آئی کیپ ٹاون نے وائلڈ کارڈ کھلاڑی کے طور پر برقرار رکھا ہے، لیکن اس ٹورنامنٹ میں ان کی شرکت کا انحصار اس بات پر ہوگا کہ ان کی بحالی کیسے ہوتی ہے۔ وہ اگلے ہفتے بارباڈوس میں انگلینڈ کی وائٹ بال ٹیم کے ساتھ ٹریننگ کرنے والے ہیں، لیکن وہ ویسٹ انڈیز کے خلاف ون ڈے یا ٹی- 20 سیریز میں حصہ نہیں لیں گے۔

ہندوستھان سماچار//محمد


 rajesh pande