ہوپ نے انگلینڈ کے خلاف بہترین انداز میں ہدف کا تعاقب کرنے کے لیے ایم ایس دھونی سے حاصل کی گئی حوصلہ افزائی کو کریڈٹ دیا
انٹیگوا، 4 دسمبر (ہ س)۔ شائی ہوپ نے سیم کرن کی گیند پر چار گیندوں پر تین چھکے لگا کر ویسٹ انڈیز کو ا
ہوپ نے انگلینڈ کے خلاف بہترین انداز میں ہدف کا تعاقب کرنے کے لیے ایم ایس دھونی سے حاصل کی گئی حوصلہ افزائی کو کریڈٹ دیا


انٹیگوا، 4 دسمبر (ہ س)۔ شائی ہوپ نے سیم کرن کی گیند پر چار گیندوں پر تین چھکے لگا کر ویسٹ انڈیز کو اتوار کو اینٹیگا میں انگلینڈ کے خلاف سنسنی خیز جیت دلائی۔ بہترین اور جارحانہ انداز میں تعاقب مکمل کرنے کا کریڈٹ سابق بھارتی کپتان مہندر سنگھ دھونی کو دیتے ہوئے ہوپ نے کہا کہ وہ ہندوستانی قدآور کھلاڑی سے ملنے والی ترغیب کی وجہ سے ایسا کرنے میں کامیاب ہوئے۔

ہوپ نے صرف 83 گیندوں پر 109 رنوں کی ناٹ آوٹ اننگز کھیلی اور اپنی ٹیم کو سات گیندیں باقی رہ کر فتح سے ہمکنار کرایا۔ اس دوران انہوں نے آخر میں ایک چھکا لگایا۔ انہوں نے 7 چھکے لگائے۔ یہ ان کی 16ویں ون ڈے سنچری اور کیریئر کی تیز ترین سنچری تھی۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ میچ کے بعد کی پریزنٹیشن کے دوران ویسٹ انڈیز کے کپتان نے ایک گیم چینجنگ چیٹ کا خلاصہ کیا جو انہوں نے کچھ دنوں پہلے سابق ہندوستانی کپتان ایم ایس دھونی کے ساتھ کی تھی، جس میں دھونی نے انہیں ایک کھلاڑی کو رن چیز کے لیےکس ذہنیت کے ساتھ کھیلنا چاہیے،اس کے بارے میں بتایا تھا۔

ہوپ نے کہا، ’’کچھ عرصہ قبل میں نے ایم ایس دھونی سے بات کی تھی اور انہوں نے مجھے بتایا تھا کہ آپ ہمیشہ اپنی سوچ سے زیادہ وقت کریز پر گزارتے ہیں اور یہ بات میرے دماغ میں بیٹھ گئی۔‘‘

کرکٹ ویسٹ انڈیز (سی ڈبلیو آئی) کے اندرون ملک چینلز سے بات کرتے ہوئے ہوپ نے کہا، ’’گراونڈ کے طول و عرض اور پھر وہاں کی تیز ہوا کو دیکھتے ہوئے، میں نے سوچا کہ اس مخصوص اوور کو نشانہ بنانا سب سے بہتر ہے۔ ہمیں معلوم تھا کہ دوسرے اوور میں اس سرے سے اسکور کرنا ایک چیلنج تھا، خاص طور پر ہوا کے خلاف... چاہے کچھ بھی ہوا ہو، میں کوشش کرنے جارہا تھا کہ آخری اوور تک کھیل کر ہمین میچ جیتنے کا سب سے اچھا موقع ملا۔‘‘

انہوں نے کہا کہ 48 ویں اوور کے بعد مجھے معلوم تھا کہ کھیل بہت زیادہ توازن میں ہے۔ اگر ہمارے پاس کھیل ختم کرنے کے لیے دو اوور باقی ہیں تو میں ہمیشہ ایک اوور کے ساتھ کھیل ختم کرنے کی کوشش کرتا ہوں۔ میں اسے کسی اور کے لیے چھوڑنا نہیں چاہتا تھا۔‘‘

میچ کی بات کی جائے تو انگلینڈ نے اس میچ میں پہلے بلے بازی کرتے ہوئے ہیری بروک (71) کی شاندار نصف سنچری اور فل سالٹ (45)، جیک کراولی (48)، سیم کرن (38) اور برائیڈن کرس( ناٹ آؤٹ 31) کی مختصر سنچریوں کی مدد سے50 اوور میں 325 رن بنائے۔

جواب میں ویسٹ انڈیز کی جانب سے شائی ہوپ (83 گیندوں پر ناٹ آوٹ 109 رن، 4 چوکے اور 7 چھکے)، ایلک اتھاناجے (65 گیندوں پر 66 رن، 9 چوکے، 3 چھکے) اور رومانیو شیفرڈ (28 گیندوں، 48 رن) 4 چوکے، 3 چھکے) کی شاندار اننگز کی بدولت 48.5 اوورز میں 6 وکٹوں کے نقصان پر 326 رن بنا کر میچ جیت لیا۔

ہندوستھان سماچار//سلام


 rajesh pande