یوم وفات خصوصی 24 مئی: مجروح سلطان پوری پہلے موسیقار تھے جنہوں نے دادا صاحب پھالکے ایوارڈ جیتا۔
ہندی سنیما کا ایک بڑا نام اور مشہور گیت نگار، ادیب اور شاعر مجروح سلطان پوری یقیناً ہمارے درمیان نہی
یوم وفات خصوصی 24 مئی: مجروح سلطان پوری پہلے موسیقار تھے جنہوں نے دادا صاحب پھالکے ایوارڈ جیتا۔


ہندی سنیما کا ایک بڑا نام اور مشہور گیت نگار، ادیب اور شاعر مجروح سلطان پوری یقیناً ہمارے درمیان نہیں ہیں لیکن ان کے لکھے ہوئے گیت آج بھی سامعین میں بے حد پسند کیے جاتے ہیں۔ مجروح سلطان پوری یکم اکتوبر 1919 کو سلطان پور، اتر پردیش میں پیدا ہوئے۔ اس لیے انھوں نے اپنے نام کے ساتھ سلطان پوری کا اضافہ کر دیا تھا۔ مجروح سلطان پوری کو شاعری لکھنے اور سنانے کا بڑا شوق تھا اس لیے وہ اکثر مشاعروں میں شرکت کرتے تھے۔ اسی دوران 1945 میں ممبئی میں منعقد ہونے والے ایک مشاعرے کے دوران فلم پروڈیوسر اے کے کاردار نے ان پر نظر ڈالی۔ مجروح کے مصرعے سن کر کاردار اپنے استاد جگر مرادآبادی کے پاس پہنچے اور ان سے فلموں کے لیے گانے لکھنے کی سفارش کرنے کو کہا۔ لیکن مجروح نے فلموں کے لیے گیت لکھنے سے انکار کر دیا، یہ کام اس وقت ادبی حلقے میں ہلکا سمجھا جاتا تھا۔ پھر کافی سمجھانے کے بعد مجروح راضی ہو گئے اور کاردار کی فلم 'شاہ جہاں' کے لیے گیت لکھا، 'جب اس نے گیسو بکھر ائے، بادل آئے جھوم کے'۔ 1949 میںایک وقت ایسا آیا جب مجروح سلطان پوری کو حکومت مخالف سمجھا جاتا تھا۔ حکومت نے اس طرح کے الزامات لگا کر انہیں دو سال کے لیے قید کر دیا، مجروح سلطان پوری جب دو سال تک جیل میں رہے تو ان کے خاندان کی مالی حالت بہت خراب ہو چکی تھی۔ ایسے میں بالی ووڈ کے معروف اداکار راج کپور ان کی مدد کے لیے آگے آئے۔ لیکن مجروح سلطان پوری نے ان سے مدد لینے سے انکار کر دیا تو راج کپور نے اسے بھی چھوڑ دیا اور مجروح کو ان کے لیے ایک گانا لکھنے کو کہا۔ اس کے بعد انھوں نے مشہور گانا 'ایک دن بک جائے گا مٹی کے مول' لکھا اور اس گانے کے لیے راج کپور نے انھیں ایک ہزار روپے ادا کیے ۔ بعد میں راج کپور نے اس گانے کو اپنی فلم 'دھرم کرم' میں استعمال کیا۔

تقریباً چار دہائیوں تک ہندی سنیما میں اپنے کام کے دوران مجروح سلطان پوری نے 'تیرے میرے ملن کی یہ رینا'، 'ہمیں تم سے پیار اتنا'، 'گم ہے کسی کے پیار میں'، 'ایک لڑکی بھیگی بھاگی سی' جیسی فلموں میں کام کیا۔ ، 'اے میرے دل کے چین'، 'چرا لیا ہے تمنے جو دل کو'، 'انھیں لوگوں نے لے لینا دوپٹہ میرا'، 'باہوں میں چلی آو¿، ہم سے صنم کیا پردہ'، ایک کے بعد ایک شاندار اور سپر ہٹ گانے لکھے۔ انہیں 1964 کی فلم 'دوستی' کے یادگار گانے 'چاہوں گا میں تجھے سانجھ سویرے' کے لیے بہترین گیت نگار کے فلم فیئر ایوارڈ سے نوازا گیا۔ مجروح کو سال 1993 میں باوقار دادا صاحب پھالکے ایوارڈ سے نوازا گیا ۔ وہ بالی ووڈ کے پہلے گیت نگار تھے جنہیں اس ایوارڈ سے نوازا گیا۔

ہندی سنیما کو ایک نئی جہت دینے والے مجروح سلطان پوری نے اپنے دور میں تقریباً ہر بڑے موسیقار کے ساتھ کام کیا۔ مجروح سلطان پوری کے لکھے ہوئے گیت آج بھی سامعین میں بڑی دلچسپی سے سنے جاتے ہیں۔ ہندی سنیما میں ایک سے بڑھ کر ایک گانے اور موسیقی دینے والے مجروح سلطان پوری 81 برس کی عمر میں انتقال کر گئے۔ وہ طویل عرصے سے پھیپھڑوں کے مرض میں مبتلا تھے۔

مجروح سلطان پوری اب ہمارے درمیاں نہیں رہے لیکن ان کے لکھے ہوئے گیت ہمیشہ زندہ رہیں گے۔

ہندوستھان سماچار


 rajesh pande