Custom Heading

ملک کے 35 ہزار اسٹیشن ماسٹر 31 کو ہڑتال پر ہوں گے
آل انڈیا اسٹیشن ماسٹرز ایسوسی ایشن، جو کئی سالوں سے اپنے مطالبات کے لیے احتجاج کر رہی تھی، نے یہ راس
ملک کے 35 ہزار اسٹیشن ماسٹر 31 کو ہڑتال پر ہوں گے


آل انڈیا اسٹیشن ماسٹرز ایسوسی ایشن، جو کئی سالوں سے اپنے مطالبات کے لیے احتجاج کر رہی تھی، نے یہ راستہ اختیار کیا

جھانسی، 14 مئی (ہ س)۔

آل انڈیا اسٹیشن ماسٹرز ایسوسی ایشن، جو کئی سالوں سے اپنے مطالبات کے لیے احتجاج کر رہی ہے، نے بتایا کہ ملک کے تمام 35 ہزار اسٹیشن ماسٹر 31 مئی کو عام تعطیل پر ہوں گے۔ آل انڈیا اسٹیشن ماسٹرز ایسوسی ایشن کے ڈویژنل سکریٹری اجے دوبے نے ہفتہ کو منعقدہ پریس کانفرنس کے دوران معلومات دیتے ہوئے یہ بات کہی۔

انہوں نے بتایا کہ ان کی ایسوسی ایشن اسٹیشن ماسٹر کے مسائل کے حل کے لیے 31 مئی کو ایک دن ملک بھر کے اسٹیشن ماسٹرز نے عام تعطیل کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری تنظیم نے سٹیشن ماسٹرز کے مسائل کے حل کے لیے کئی بار احتجاج کیا، میمورنڈم دیے، ریلوے حکام سے ملاقات کی۔ لیکن ریلوے ملازمین کے مسائل کے حل کو نظر انداز کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پورے ہندوستان کے 35 ہزار اسٹیشن ماسٹر سال 2020 سے مطالبات کے حل کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔ اپنے سات نکاتی مطالبات کو شمار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نائٹ ڈیوٹی الاو¿نس کی حد 43600 روپے کا آرڈر منسوخ کیا جائے۔ ریکوری کے احکامات واپس لیے جائیں۔ سٹیشن ماسٹرز کی خالی آسامیوں کو پر کیا جائے۔ ایم اے سی پی اسکیم کا فائدہ 2016 سے دیا جائے۔ اسٹیشن ماسٹر کو سیفٹی اور اسٹریس الاو¿نس دیا جائے۔ اسٹیشن ماسٹر کو کیڈر کی درجہ بندی دی جائے۔ نئی پنشن اسکیم بند کر کے پرانی پنشن نافذ کی جائے۔

آئی آر ای ایممیں ضروری تصحیح کی جا سکتی ہے تاکہ اسٹیشن ماسٹر کواستائپ کی نئی شرحیں طے کرنے کے قابل بنایا جا سکے۔ ان مطالبات کو لے کر ملک بھر کے اسٹیشن ماسٹر 31 مئی 2022 کو ہڑتال پر ہوں گے۔ اس کے لیے جھانسی ڈویژن کے کل 500 اسٹیشن ماسٹروں میں سے 350 کی چھٹی کے لیے درخواستیں ایسوسی ایشن کے پاس آئی ہیں۔ حکام نے لوگوں سے اپیل کی کہ اگر آپ 31 تاریخ کو سفر کر رہے ہیں تو آپ اپنا سفر ملتوی کر دیں تاکہ آپ کو کسی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

اس دوران مرکزی نائب صدر اجے نارائن، ڈویژنل خزانچی لکشمن رچاریہ، سرکل صدر نشیتھ ماتھر، سی ایل یادو، راجیش نام دیو، راجیش مینا، شیام سریواستو وغیرہ موجود تھے۔

ہندوستھان سماچار


 rajesh pande