روس کے زیر استعمال ڈرونزمیں کینیڈین پرزے دریافت، تحقیقات شروع
پیرس،06دسمبر(ہ س)۔ وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے منگل کو کہا کہ کینیڈا کے حکام اس بات کی تحقیقات کر رہے ہی
ایرانی ڈرون


پیرس،06دسمبر(ہ س)۔

وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے منگل کو کہا کہ کینیڈا کے حکام اس بات کی تحقیقات کر رہے ہیں کہ ان کی سرزمین پر تیار کیے گئے پرزے ایرانی ڈرون تک کیسے پہنچے جنہیں روس یوکرین میں اپنی جنگ میں استعمال کر رہا ہے۔

مقامی میڈیا نے رپورٹ کیا کہ یورپی سٹیٹ واچ کے تحقیقی مرکز کے کارکنوں اور کیف کے حکام کو شاہد 136 میں مغربی کمپنیوں کے تیار کردہ 30 ٹکڑوں میں سے Tallysman Wireless کمپنی، جو اوٹاوا میں واقع ہے، کے تیار کردہ اینٹینا کے اجزاء ملے ہیں۔ جو ڈرون لانچ کئے گئے یہ روس کے ہتھیاروں کا ایک حصہ ہیں۔

ٹروڈو نے کہا کہ ہم یقیناً ان رپورٹس پر بہت فکر مند ہیں۔ ہم نہیں چاہتے کہ روس کی یوکرین میں غیر قانونی جنگ میں یا ایران سے تعاون میں کینیڈین ٹیکنالوجی استعمال ہو۔

انہوں نے کہا حساس ٹیکنالوجی کے لیے برآمدی لائسنس کا سختی سے اطلاق کیا جائے گا۔ٹروڈو نے کہا کہ ہم اس کمپنی کے ساتھ تعاقب کریں گے، اس بات کا تعین کرنے کی کوشش کریں گے کہ وہ پراڈکٹس کس طرح ختم ہونے چاہئیں جنہیں ایرانی حکومت کے دسترس میں پہنچ کر ختم نہیں ہونا چاہیے تھا۔انہوں نے مزید کہا کہ کمپنی ٹیلیزمین وائرلیس تحقیقات میں مکمل تعاون کر رہی ہے۔ اوٹاوا نے حال ہی میں کئی ایرانی کمپنیوں پر پابندیاں عائد کی ہیں جو ڈرون تیار کرتی ہیں۔

ہندوستھان سماچار


 rajesh pande