فوج پر اپنے ٹوئٹ پر ٹرولز کے نشانے پر آنے والی ریچا چڈھا نے معافی مانگ لی
بالی ووڈ میں اپنے بے باک بیانات اور بے باک انداز کے لیے جانی جانے والی فلم اداکارہ ریچا چڈھا نے حال
فوج پر اپنے ٹوئٹ پر ٹرولز کے نشانے پر آنے والی ریچا چڈھا نے معافی مانگ لی 


بالی ووڈ میں اپنے بے باک بیانات اور بے باک انداز کے لیے جانی جانے والی فلم اداکارہ ریچا چڈھا نے حال ہی میں فوج کے بارے میں ایسی ٹوئٹ کی کہ ان پر فوج کی توہین کا الزام لگایا جا رہا ہے۔ درحقیقت، شمالی فوج کے کمانڈر لیفٹیننٹ جنرل اوپیندر دویدی نے منگل کو کہا تھا کہ ہندوستانی فوج پاکستان کے زیر قبضہ کشمیر کو واپس لینے جیسے احکامات پر عمل کرنے کے لیے تیار ہے۔ اس بیان کا حوالہ دیتے ہوئے ریچا چڈھا نے ٹوئٹر پر لکھا، 'گلوان ہی کہہ رہا ہے'۔

اس ٹویٹ کے بعد ریچا ٹرولز کے نشانے پر آگئیں اور ان پر فوج کی توہین کا الزام لگایا گیا۔ سوشل میڈیا صارفین نے اسے غدار بھی کہنا شروع کردیا۔ ساتھ ہی ریچا چڈھا نے اس ٹویٹ پر معافی مانگ لی ہے۔

جمعرات کو سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ شیئر کرتے ہوئے ریچا چڈھا نے لکھا - 'میرا مقصد کسی کو تکلیف پہنچانا نہیں تھا۔ اگر میرے تین الفاظ سے کسی کو تکلیف پہنچی ہو تو میں معذرت خواہ ہوں۔ اگر میرے الفاظ سے انجانے میں بھی کسی کے جذبات مجروح ہوئے ہیں تو میں اس کے لیے معذرت خواہ ہوں۔ میرے نانا خود فوج میں لیفٹیننٹ کرنل کے عہدے پر تھے۔ 1960 کی ہند چین جنگ میں انہیں ٹانگ میں گولی لگی تھی۔ میرے ماموں بھی چھاتہ بردار تھے۔ یہ میرے خون میں ہے۔ فوج میں کوئی شہید ہوتا ہے تو پورا خاندان اس سے متاثر ہوتا ہے۔ فوج میں کوئی زخمی ہو بھی جائے تو بہت تکلیف ہوتی ہے۔ یہ میرے لیے ایک جذباتی مسئلہ ہے۔

قابل ذکر ہے کہ سال 2020 میں گلوان میں ہندوستانی فوج اور چینی فوجیوں کے درمیان جھڑپ ہوئی تھی۔ اس جھڑپ میں 20 بھارتی فوجی مارے گئے۔

ہندوستھان سماچار


 rajesh pande