Custom Heading

ایم سی ڈی انتخابات سے قبل بی جے پی کی ہندووں کو مسلمانوںسے لڑانے کی تیاری شروع
بی جے پی نے اوکھلا میں بھی فسادات بھڑکانے کی کوشش کی تھی، پھر مسلم کمیونٹی گروپ نے ہائی کورٹ میں جا
سوربھ بھاردواج


بی جے پی نے اوکھلا میں بھی فسادات بھڑکانے کی کوشش کی تھی، پھر مسلم کمیونٹی گروپ نے ہائی کورٹ میں جا کر مندر گرانے کی بی جے پی کی سازش کو بے نقاب کیا: سوربھ بھردواج

نئی دہلی، 28 ستمبر(ہ س)۔

عام آدمی پارٹی کے چیف ترجمان سوربھ بھردواج نے کہا کہ بی جے پی نے ہر بار کی طرح ایم سی ڈی انتخابات سے پہلے ہندووں کو مسلمانوں کے خلاف لڑانے کی تیاری شروع کر دی ہے۔ تاکہ مذہب کی بنیاد پر انتخابات میں ووٹ مانگے جائیں۔ بی جے پی کے زیر اقتدار مشرقی دہلی میونسپل کارپوریشن نے مندر کو مسمار کرنے اور چوہان بانگڑ کے مسلم اکثریتی علاقے میں عمارت بنانے کی منظوری دے دی ہے۔ چوہان بانگڑ میں واقع سو سال پرانے مندر پر ایک بورڈ لگایا گیا ہے کہ ای ڈی ایم سی نے اس مندر کی جگہ پر عمارت کا منصوبہ منظور کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ جب عام آدمی پارٹی کے کونسلروں نے اس سازش کو بے نقاب کیا اور بی جے پی کو بے نقاب کیا تو ہمارے تمام کونسلروں کو 15 دن کے لیے معطل کردیا گیا ہے۔ بی جے پی نے اوکھلا میں فسادات بھڑکانے کی بھی کوشش کی تھی۔ اس کے بعد مسلم سماج کا ایک گروپ ہائی کورٹ گیا اور مندر کو گرانے کی بی جے پی کی سازش کو بے نقاب کیا۔ عام آدمی پارٹی کے مرکزی ترجمان اور ایم ایل اے سوربھ بھردواج نے منگل کو پارٹی ہیڈ کوارٹر میں پریس کانفرنس سے خطاب کیا۔ سوربھ بھردواج نے کہا کہ میونسپل کارپوریشن کے چند ماہ بعد دہلی کے اندر انتخابات ہوں گے۔ اس کے لیے بی جے پی نے اپنی تیاری شروع کر دی ہے۔ بی جے پی نے ہر الیکشن سے پہلے کی طرح تیاری کی ہے۔ اتر پردیش اسمبلی انتخابات، دہلی اسمبلی 2015 ، 2020 کے انتخابات کی طرح ، بی جے پی نے میونسپل کارپوریشن انتخابات کی تیاریاں کی ہیں۔ ہندوو¿ں کا مقابلہ مسلمانوں سے اور ہندوو¿ں کا عیسائیوں سے ہونا چاہیے۔ اس لڑائی کو اتنا بڑھایا جانا چاہیے کہ مذہب کی بنیاد پر ووٹ مانگے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ اس بار بھی بی جے پی نے ہندوو¿ں کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے کی ہر کوشش شروع کی ہے۔ تاکہ اس پر سیاست کی جائے ، دیکھیں کہ یہ ہندوو¿ں کے ساتھ کتنا برا ہو گیا ہے۔ اس سے ایک بار پھر ہندوو¿ں کے جذبات بھڑکائے جائیں۔ چوہان بانگڑ علاقہ بی جے پی کے زیر اقتدار مشرقی دہلی میونسپل کارپوریشن میں مسلم اکثریت ہے۔ اس مسلم اکثریتی وارڈ کے اندر ایک ہندو مندر ہے۔ اب اس مندر کو منہدم کرنے اور ایک عمارت کھڑی کرنے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔ اس تیاری میں سب سے بڑا شریک بی جے پی کے زیر اقتدار مشرقی دہلی میونسپل کارپوریشن ہے۔ چوہان بانگڑ میں واقع 100 سال پرانے مندر پر ایک بورڈ لگا دیا گیا ہے کہ ای ڈی ایم سی نے اس مندر کے آنگن میں عمارت کا منصوبہ منظور کیا ہے۔ ای ڈی ایم سی کی چال مندر کو منہدم کرنا اور عمارت کی تعمیر شروع کرنا ہے۔ اس کے بعد واٹس ایپ پر زہر پھیلایا جائے کہ دیکھیں کہ دہلی کے اندر مسلم اکثریتی علاقے میں ہندو مندر کو مسمار کر دیا گیا ہے۔ یہ بی جے پی کی کوشش ہے کہ میونسپل کارپوریشن کا الیکشن سڑک ، نالی ، صفائی پر نہ لڑا جائے۔

دہلی میونسپل کارپوریشن کا الیکشن اس لیے لڑنا چاہیے کہ مندر کیوں گرایا گیا۔ یہ پوری بی جے پی کی سازش ہے۔سوربھ بھردواج نے کہا کہ عام آدمی پارٹی کے کونسلروں نے کل اس سازش کو بے نقاب کیا اور بی جے پی کو بے نقاب کیا۔ اس کے بعد بی جے پی نے ہمارے تمام کونسلروں کو 15 دن کے لیے معطل کر دیا ہے۔ یہ سراسر چوری اور سینہ زوری ہے۔ بی جے پی فسادات بھڑکانے کے لیے ایک مکمل اسکیم لے کر آئی ہے۔ بے نقاب ہونے پر ہمارے کونسلروں کو معطل کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ اخبار میں شائع ہوا ہے کہ فسادات کے دوران اتنے لوگ مارے گئے اور بہت سی خواتین کی عصمت دری کی گئی لیکن دہلی کے اندر فسادات کی وجہ کے بارے میں لکھنے میں ناکام رہے۔ یہ سوچ کر کہ یہ بات نہ لکھی جائے تو بہتر ہے مگر لکھنا ضروری ہے۔سوربھ بھردواج نے کہا کہ فسادات کو بھڑکانے کی کوششیں صرف چوہان بانگڑ علاقے میں نہیں ہو رہی ہیں۔ دوسرے مسلم اکثریتی علاقوں میں بھی فسادات بھڑکانے کی کوشش کی گئی۔ دہلی کی اوکھلا اسمبلی مسلم اکثریت ہے۔ وہاں اس طرز پر ایک پرانے مندر کو منہدم کرکے عمارت بنانے کا کام شروع ہوا۔ ایس ڈی ایم سی کو بار بار شکایات دی گئیں کہ یہاں مندر کو مسمار کیا جا رہا ہے، آپ اسے روکیں۔ بی جے پی کے زیر اقتدار جنوبی دہلی میونسپل کارپوریشن نے کوئی کارروائی نہیں کی۔ ایم ایل اے نے کہا کہ ایسی صورتحال میں یہ سوچنے کی بات ہے کہ مندر کو منہدم کیا جا رہا ہے اور بی جے پی کی حکومت والی ایس ڈی ایم سی اور بی جے پی کی حکومت والی دہلی پولیس کوئی کارروائی نہیں کر رہی ہے۔ پھر آخر کار مسلم سماج کا ایک گروپ ہائی کورٹ گیا اور بتایا کہ دہلی میونسپل کارپوریشن اور دہلی پولیس اپنی نگرانی میں ایک مندر کو مسمار کر رہی ہے۔ یہ ایک مسلم اکثریتی علاقہ ہے اور وہاں صرف 40 سے 50 ہندو خاندان رہتے ہیں۔ اس مندر کو مسمار کیا جا رہا ہے تاکہ پہلے یہ مندر مکمل طور پر مسمار کر دیا جائے اور پھر اگر انتخابات قریب ہیں تو اس مسئلے پر الیکشن لڑا جائے۔ اس کے بعد ، دہلی ہائی کورٹ نے کارروائی کی اور دہلی کی میونسپل کارپوریشن کو کھینچا کہ یہ کیسے ممکن ہے۔ دہلی میونسپل کارپوریشن نے کہا کہ ہمیں کوئی معلومات نہیں ملی۔ وہاں ہم نے کوئی مسمار نہیں کیا اور نہ ہی کوئی تعمیراتی سرگرمی حاصل کی۔ انہوں نے کہا کہ تعمیراتی سرگرمی اس وقت ہوگی جب پہلے مندر کی مسماری مکمل ہو جائے گی۔ کیونکہ ابھی ابھی دھرم شالا کے مندر کا ایک حصہ مسمار کر دیا گیا تھا۔ اس کے بعد مندر کو منہدم کرنا پڑا۔ اس کے بعد بی جے پی لیڈر آتے اور واٹس ایپ کے ذریعے زہر پھیلاتے۔ اس کے خلاف دوبارہ الیکشن لڑا جاتا۔ سوربھ بھردواج نے کہا کہ بی جے پی کی اس سازش کو بے نقاب کیا جانا چاہیے۔ کیونکہ جن لوگوں نے مندر کو تباہ کیا وہ خود بی جے پی کے اندر بیٹھی حکومت ہیں۔ وہاں کے مسلمانوں کے گروپ کو عدالت جانا پڑتا ہے اور کہنا پڑتا ہے کہ مندر کو مسمار کیا جا رہا ہے۔ پھر ہائی کورٹ کو اس معاملے میں مداخلت کرنا پڑتی ہے۔

ہندوستھان سماچاراویس/محمد

 rajesh pande